Urdu Journal

TAHQEEQI JAREEDA

ISSN 2521-8204

حرفِ آغاز

“تحقیقی جریدہ” کا تیسرا شمارہ پیش خدمت ہے۔
پوری دنیا ایک گلوبل ویلج بن چکی ہے ۔جدید ذرائع ابلاغ نےاگرچہ علم کے حصول کے ذرائع آسان سے آسان بنا دیئے ہیں لیکن کتاب اور استاد کی اہمیت اپنی جگہ برقرار ہے ۔کمپیوٹر ،لیپ ٹاپ اور ملٹی میڈ یا سےاطلاعات کی فراہمی تو ہو سکتی ہے لیکن کتاب صرف اطلاع ہی فراہم نہیں کرتی اس سے آگے بڑھ کر کردارسازی کاکام بھی کرتی ہے۔استاد کتاب کے مضمون کو آسان سے آسان بنا کر طالبات کو زندگی گزارنے کے مراحل سے واقف کراتا ہےجو فرد کے ساتھ ساتھ اجتماعی شعور کے ارتقاءکے لیے ضروری ہیں اس لیے کتاب کے ساتھ ساتھ درس وتدریس کے شعبے میں استاد کی اہمیت بھی اپنی جگہ مسلمہ ہے۔ معلمی ایک پیغمبرانہ پیشہ ہے جو حلیمی ،بردباری اور انکساری کا تقاضہ کرتی ہے۔ہمارے ماضی کے اساتذہ میں یہ تمام صفات موجود تھیں لیکن کیا موجودہ دور کے اساتذہ کی اکثریت ان صفات کا دعوی کر سکتی ہے/ ہمارے تدریسی شعبے خصوصا جامعات میں اکثر اساتذہ کا رویہ متکبرانہ ہے کہ طالبات ان سے بےزار ہو جاتی ہیں ۔تدریس کی بات چھوڑیں کہ اساتذہ کی اکثریت کس ذوق شوق سے پڑھاتی ہے اس کا حال تو طالبات ہی جانتی ہیں اور یقینا جانتی ہیں کیوں کہ ان سے زیادہ کوئی استاد کا جج نہیں ہو سکتا ،طالبہ سمجھتی ہے کہ کو ن سا استاد کتنی لگن سے پڑھا رہا ہے اور کون سااستاد وقت گزاری کر رہا ہے
جامعات میں اب مقالہ نگاری کا کام بھی شروع ہو چکاہے۔ مقالہ نگاروں کو سب سے زیادہ شکایت اپنے مقالے کے نگران سے ہوتی ہے کہ وہ ان کو وقت نہیں دیتے جس سے ایک طرف تو مقالہ زچ ہوتا ہے اور دوسری طرف تاخیر کے ساتھ ساتھ مقالہ غیر معیاری بھی ہوجاتاہے ۔یہ ایک اہم مسلہ ہے جس پر مقالات کے نگرانوں کی توجہ کی ضرورت ہے
ہماری کوشش ہو گی کہ ہر شمارہ وقت پر شائع ہو اور ایچ۔ای۔سی کے مقررہ معیار اور طریقہ کار کی پابندی کی جائے۔
’’تحقیقی جریدہ‘‘کا ہر شمارہ یونیورسٹی کی ویبپر بھی موجود ہو گا۔
“www.gcwus.edu.pk”

 



مقالہ نگاروں کے لیے ہدایات


٭ ’’تحقیقی جریدہ‘‘تحقیقی و تنقیدی مجلہ ہے جس میں اردو زبان و ادب کے حوالے سے غیر مطبوعہ مقالات  ایچ ای سی  کے طے کر دہ ضوابط کے مطابق شائع کیے جاتے ہیں۔
٭ تمام مقالات اشاعت سے قبل پیئررویو کے لیے مختلف ماہرین کو بھیجے جاتے ہیں جن کی منظوری کے بعد مقالات ’’تحقیقی جریدہ‘‘ میں شائع کیے جاتے ہیں۔
٭ مقالہ ارسال کرتے ہوئے درج ذیل اصولوں کو ملحوظ رکھاجائے جو کہ آج کی ترقی یافتہ علمی دنیا میں بالعموم رائج ہیں ۔ مقالہ ایم ایس۔ورڈ  فارمیٹ            میں اےفور جسامت کے کاغذ پر ایک ہی جانب کمپوز کروا کر بھیجا جائے۔ جس کے متن کا مسطر  (پانچ بائے سات)  انچ میں رکھا جائے۔  حروف جمیل نوری نستعلیق میں ہوں جن کی جسامت’ 13‘ پوائنٹ ہو۔ 
 مقالے کے ساتھ انگریزی زبان میں اس کا خلاصہ(ابسٹریکٹ)   (تقریباً ۱۰۰ الفاظ) ، عنوان اور اس کا انڈیکس بھی شامل کیا جائے۔ مقالے کی  سی ڈی بھی ساتھ ارسال فرمائیں۔ یعنی مقالے کی ’’ہارڈ‘‘ اور ’’سوفٹ‘‘کاپی دونوں ارسال کی جائیں۔
٭ مقالے کے عنوان کا انگریزی ترجمہ، مقالہ نگار کے نام کے انگریزی ہجے اور موجودہ عہدہ نیز مکمل پتہ بھی درج کیا جائے۔
٭ ’’تحقیقی جریدہ‘‘ میں بالخصوص اردو زبان و ادب کے درجِ ذیل موضوعات پر مقالات شائع کیے جاتے ہیں۔ تحقیق: لسانیات، تدوین متن ، تحقیق متن کے موضوعات ، علمی و تنقیدی مباحث ، مطالعہ ادب،تخلیقی ادب کے تنقیدی و تجزیاتی مباحث اور مطالعہ کتب۔
٭ مقالہ میں استعمال ہونے والے تمام حوالہ جات و حواشی کی نمبر ترتیب ایک ہی ہوگی اور مقالہ کے آخر میں حوالہ جات و حواشی درج ذیل طریقے سے دیئے جائیں گے۔

: ا۔ مطبوعہ کتب کا حوالہ

سلیم اخٹر، ڈاکٹر ” تنقیدی اصطلاحات: تو ضیحی لغت”، لاہور سنگ میل پبلی کیشنز، 2011ء، ص 119

: ب۔ مطبوعہ مقالات کاحوالہ

گوپی چند نارنگ ڈاکٹر، ” مابعد نو آبادیات” مشمولہ “سیپ کراچی”، مدیر نسیم درانی، ص 182

: ج۔ مجلہ، جریدہ یا رسالہ میں شامل مقالہ کاحوالہ

تبسم کاشمیری، ڈاکٹر، ’’آزاد عالم دیوانگی‘‘ مشمولہ ’’تخلیقی ادب‘‘ شمارہ: ۷ جون ۲۰۱۰ئ۔ مدیر ڈاکٹر روبینہ شہناز۔ ڈاکٹر شفیق انجم ، نیشنل یونیورسٹی آف ماڈرن لینگویجز، اسلام آباد ،ص۱۲

: د۔ ترجمہ کا حوالہ

فرانز فینن، “افتادگانِ خاک”، ترجمہ محمد پرویز/ سجاد باقر رضوی، لاہور، نگارشات 1969ء، ص 35

: ہ۔ اخبارکی کسی تحریر کاحوالہ

انور سدید، ڈاکٹر ’’شہزاد احمد کی یاد میں‘‘ روزنامہ ’’نوائے وقت‘‘ راولپنڈی، ۲۱۔ اگست ۲۰۱۳

: و۔مکتوب کا حوالہ

مکتوب ظہور احمد اعوان بنام نذیر تبسم مورخہ۱۱۔ اگست ۲۰۰۷ء مشمولہ ’’ابن بطوطہ کے خطوط‘‘ لاہور، الوقار پبلی کیشنز، ۲۰۰۸ء ص۲۹۷

: ز۔ ریکارڈ یا ذخیرے کا حوالہ

Descriptive Catalogue of Qaid-e-Azam papers:F.262/100

: ح۔ انٹر نیٹ، آن لائن دستاویزات کا حوالہ

http://hin.minoh.osaka-u.ac.jp/urdumetresample/urdu0527.html(مورخہ:۱۹؍جولائی ۲۰۱۱ئ:بوقت ۲۴:۸،رات)
٭ مندرجات کی تمام تر ذمہ داری محققین پر ہوگی۔
(tjurdu@gcwus.edu.pk)  ٭ مقالات’’ تحقیقی جریدہ ‘‘ کی ای میل 

  پر بھی بھیجے جا سکتے ہیں۔

EDITORIAL / ADVISORY BOARD

  • Patron –in- Chief:Prof.Dr.FarhatSaleemi, Vice Chancellor
  • Parton:Prof. Dr. Hafiz Khalil Ahmad (In-charge Dean Arts & Social Sciences)
  • Editor: Dr.Muhammad Afzal Butt, (ChairpersonDepartment of Urdu.)
  • Coordinators: Dr. Sabina AwaisAwan/ Dr.ShaguftaFirdous

Advisory Board: (National)

  • Prof.Dr.TahseenFaraqi, Director Majilas-e-TarqiyaAdab, Lahore
  • Prof.Dr. Anwar Ahmad, BahauddinZakariya University, Multan.
  • Prof.Dr.RasheedAmjad, Ex-Dean Language & Literature International Islamic University, Islamabad.
  • Prof.Dr. Muhammad Yousafkhushk, Dean Social Sciences, Shah Abdul Latif University, Khairpur (Sindh).
  • Prof.Dr.Tanzeem-Ul-Firdous, Head Urdu Department, Karachi University, Karachi.
  • Dr.Nasir Abbas Nayer, D.G Urdu Science Board, Lahore.
  • Prof.Dr.RubinaShahnaz, Head Urdu Department, National University of Modern Languages, Islamabad.

Advisory Board (International)

  • Prof.Dr. Ibrahim Muhammad Ibrahim, Chairman Urdu Department, Al Azhar University, Egypt.
  • Prof.Dr. Khalid Tauq Aar, Chairperson Urdu Department, Ankara University, Istanbul, Turkey.
  • Prof.Dr.Khawaja Muhammad Ekram-ud-din, Jawaharlal Nehru University, New Delhi, India.
  • Prof. So Yamane Yasir, Department of Area Studies, Osaka University, Japan.
  • Dr. Muhammad Q. Marsi, Chairperson Urdu Department, Tehran University, Iran.
  • Prof.Dr. Zhou Yuan, Head Urdu Department, Beijing Foreign Studies University, China.
  • Dr.Sohail Abbas, Tokyo University of Foreign Studies, Japan.


>

Sr.#Issue NameVolumISSN #Download
01Urdu Tehqeeqi JareedaISSUE: 12521-8204
02Urdu Tehqeeqi JareedaISSUE: 22521-8204


CONTACT US

Sr#ContentDetails
01AddressDepartment of Urdu, GC Women University, Sialkot
02Phone No052-9250137-192-138
03Cell Phone No0301-6332211
03PriceRs:/- 500
04Emailtjurdu@gcwus.edu.pk